Sunday, December 12, 2004

پاکستانی امریکیوں کی قدامت پسندی

عید سے کچھ عرصے پہلے میرے پاس ایک عجیب سی ای۔میل آئی۔ چاند رات پر ایک میلے کا اعلان تھا۔ میلے پر کھانے، چوڑیوں، مہندی وغیرہ کے سٹال تھے۔ موسیقی کا بھی انتظام تھا۔ غالبا پاکستان سے کچھ موسیقار خاص طور پر آرہے تھے۔ بالکل ایسا نقشہ تھا جیسے کہ کراچی یا لاہور میں چاند رات ہو۔ ای۔میل کی آخری سطر پر لکھا تھا، صرف خواتیں کے لیے۔۔۔

یہ پڑھ کر میری ہنسی چھوٹ گئی۔ یعنی کمال ہے۔ اکیسویں صدی ہے، امریکہ کی فراخدلانہ ریاست میساچوسیٹس میں یہ اعلان کیا جارہا ہے۔ اور ان قدامت پسند وحشیوں نے اپنی دقیانوسیت کے زہر کو پھیلانے میں کوئی کثر نہیں چھوڑی۔ اب تو شہری پاکستان میں بھی ایسا نہیں ہوتا کہ مردوں اور عورتوں کو جانوروں کی طرح علیحدہ رکھا جائے۔

خیر میں نے ایک جوابی ای۔میل بھیج ڈالی جس کا نچوڑ یہ تھا کہ بھلا یہ کس قسم کی دقیانوسی روایت ہے؟ کسی خاتون کا جواب آیا۔ فرمانے لگیں کہ آپ اپنے تنگ ذہن خیالات اپنے آپ تک مہدود رکھیں۔ میں نے جواب دیا کہ جنسی علیحدگی کے خلاف ہونا کوئی تنگ ذہنی نہیں۔ بلکہ اس کے بالکل برعکس ہے۔ یہ سن کر محترمہ بگڑ گئیں۔ لکھا "وائے ڈونٹ یو شٹ دا فک اپ ناؤ!" ایسی رنگین زبان کا میرے پاس کوئی جواب نہ تھا اسلیے گفتگو اختتام پزیر ہوئی۔

یہی بدقسمتی ہے امریکہ میں مقیم کچھ پاکستانیوں کی۔ ان کا پاکستان اس وقت میں اٹکا ہوا ہے جب وہ وطن چھوڑ آئے تھے۔ وطن کہاں سے کہاں نکل چکا ہے، ان قدامت پسندوں کو خبر نہیں۔ ان کا بس چلے تو یہ تمام عورتوں کو برقعہ پہنا دیں اور سولہ سالہ لڑکیوں کی داڑھی والے متّقی نوجوانوں سے شادی کروادیں۔ ایک طرح سے اچّھا ہے کہ یہ لکیر کے فقیر پاکستان سے باہر ہیں۔ لیکن دوسری طرف یہ اپنے دقیانوسی خیالات امریکہ میں پھیلا کر عام پاکستانیوں کو برا نام دیتے ہیں۔ سب کو سعودی عرب بھجوادینا دینا چاہیے جہاں یہ اپنی جہالت پر کھل کے عمل کرسکیں۔

تبصرے  (3)

Blogger Kunwal

is khatoon ne aap ko theek tareeke se jawab nahin diya. lekin main samajh sakti hoon ke ladies function kyoon hote hain. main bhi aksar aise functions mein jati hoon. ho sakta hai, ke us function mein auratein/larkiyan ne khud nachna bhi ho (aur mardon ke samne nahin karna chahtin ho). agar khuli jaga na ho, to shayed burqa pehne wali auratein burqa bhi utar dein. ya shayed kaiyon ke shohar na pasand kare ke un ki biwiyan mixed gatherings mein jaya aur ziadah free hoein. ya phir sirf relax hone ki baat hai. aap ko agar pata hai ke yahan sirf auratein hain to aap ziadah carefree ho sakte haiN.
aur rehi baat chaand raat ki. main ne to socha tha ke chaand raat sirf auratein aur larkiyan hi manati hain. mujhe nahin pata tha ke aadmi bhi chaand raat manate hai...

3:33 PM  
Blogger ضیا

شکریہ کنول آپ کی تشریف آوری کا۔ افسوس کہ میں آپ کے خیالات سے اتّفاق نہیں کرسکتا۔

آپ کے بلاگ کا عنوان بہت شاعرانہ ہے۔ امّید ہے اردو میں بلاگ کرنے والوں کی تعداد بڑھتی رہے گی۔

9:26 PM  
Blogger Danial

Zia bhai Mayn Kanwal behen kay khayalat say ittefaq karta hoon. Chand Raat per Larkiyon aur Aurton ki Alayhda Mehfilayn Humari Tehzeeb ka Khasa Rahi hain. Aisa nahin keh In Mahafil say Mardon ko dor rakhnay ki koshish ki jati ho balkeh yeh hamesha say khalisatan zanana muamla hi samjha jata raha hai. Hatta keh baz gharon may tu Mehrim bhi aksar aisi taqreebat aur mahafil mayn shareek nahi hotay.

Yeh daqyanosiyat nahin chand raat mananay ka rivyati andaz hai aur yaqeen janiyay ap aisi kisi mehfil mayn agar shareek honay ki himaqat kar bhi bethay tu aisay bore hongay kay aynda na shareek hongay.

Waisay Khavateen aur Marad Hazrat ki alayhda mehfilon ka Duqyanosiyat say kiya talluq hai?

Aur Karachi ya Lahore mayn bhi Chand Raat ko Khavateen kay liyay makhsoos bazaron aur mahafil ka intezam kiya jana kuch salon say maqboliyat pa raha hai. Jo taqareeb log pehlay gharon mayn kartay thay ab bazaron mayn hoti hain.

10:11 PM  

تبصرہ کیجیے

کیفے حقیقت