Saturday, June 11, 2005

مچّھر اور آدمی

دیسی ٹورنٹس کی سائٹ پر یہ فقرہ نظر آیا۔
ایک مچّھر آدمی کو لیچڑ بنا دیتا ہے۔

نجانے کیوں یہ پڑھنے کے بعد میرا ہنس ہنس کر برا حال ہوگیا۔ کیا بیوقوفی ہے! کراچی کی زبان میں لیچڑ اسے کہتے ہیں جو آپ کے ساتھ چپک جائے، جیسا کہ بِن بلایا مہمان۔ اسے جملے میں استعمال کرتا ہوں۔
بہت رات ہوگئی تھی لیکن طارق لیچڑ ہوکر جانے کا نام ہی نہیں لےرہا تھا۔

لیچڑ کو آپ اسم کی طرح بھی استعمال کرسکتے ہیں۔
بہت رات ہوگئی تھی لیکن طارق لیچڑوں کی طرح بیٹھا رہا۔

لغت کھول کر دیکھی تو معلوم ہوا کہ لیچڑ کے اصل معنی کنجوس کے ہیں۔ اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ایک مچّھر آدمی کو کنجوس یا لیچڑ کیسے بناتا ہے؟

اس کا جواب صرف کراچی کی گرمی کی ایک رات گزارنے والے سمجھ سکتے ہیں۔ ایسی رات جب کے۔ای۔ایس۔سی نے اپنا کمال دکھایا ہو اور ایک مچھر خواب گاہ میں دندناتا پھر رہا ہو۔

بہرحال، پھر بھی یہ فقرہ ایسا تو نہیں کہ ہنس ہنس کر انسان کی آنکھوں سے آنسو بہنے لگیں۔ اگر آپ بھی اسے پڑھنے کے بعد آنکھوں میں نمی پائیں تو مجھے ضرور بتائیے گا۔

تبصرے  (6)

Blogger Hypocrisy Thy Name

مجھ پر پہلی بار یہ انکشاف ہوا کہ کراچی والے چیچڑ اور لیچڑ میں فرق نہیں جانتے اور انہوں نے لیچڑ کو چیچڑ سمجھ رکھا ہے ۔ اچھا ہوا کہ آپ نے لغت یا ڈکشنری دیکھ لی ورنہ میں آپ کی تحریر پڑھتے ہوئے سوچ رہا تھا کہ کراچی والوں نے اردو کا ایک اور لفظ مروڑ دیا ۔ کراچی والے کسی اور کو بولنے تو کم ہی دیتے ہیں اور اپنے آپ کو اردو کا ماہر سمجھتے ہیں لیکن جو اردو کا حشر ان کے ہاتھوں ہوا ہے شائد فیصل آبادیوں کے ہاتھوں بھی نہیں ہوا ہوگا ۔ نہ صرف لفظوں کے معنی بلکہ لفظ بھی گٹر مٹر کر دیتے ہیں ۔ اب آپ آئندہ کے لئے یاد کر لیجئے کہ چیچڑ چپکنے والے کو کہتے ہیں اور لیچڑ کنجوس کو۔

6:15 AM  
Blogger Hypocrisy Thy Name

اور ہاں ۔ بہر ہال نہیں ہوتا بلکہ بہر حال ہوتا ہے۔ ہال انگریزی والا ہوتا ہے جس کا مطلب بڑا کمرہ ہوتا ہے

6:19 AM  
Blogger ضیا

تنقید کا شکریہ۔ یہ تو مزاق کی بات تھی، آپ تو کچھ سنجیدہ ہو گئے۔ اصل مسئلے پر تو آپ نے روشنی ڈالی ہی نہیں: آخر ایک مچّھر آدمی کو کیسے لیچڑ بنا دیتا ہے؟

4:08 PM  
Blogger جہانزیب

ميرے خيال ميں تو لفظ ليچڑ پنجابی کا لفظ ہے۔ اور اسکے مطلب وہی ہے جو ضيا نے لکھا ايک چپک جانے والا جان نا چھوڑنے والا مثلا يار تم تو ليچٹ ہی ہو گيے ہو ميری جان بخشو وغيرہ وغيرہ۔ اور رہ گئی بات ايک مچھر آدمی کو ليچڑ کيسے بنا ديتا ہے تو يہ سوچنے والی بات ہے حالانکہ مچھر خود ليچڑ ہوتا ہے جان نہيں چھوڑتا لوگ مختلف اقسام کے لوشن استعمال کرتے ہيں سپرے کرتے ہيں اور گاؤں ميں مچھر دانياں استعمال کرتے ہيں مگر حضرت مچھر ہيں کہ خون کے پياسے شايد مچھر کی مستقل مزاجی کو ديکھ کر انسانوں ميں بھی يہ تحريک پيدا ہوئی ہو اور جس کو مچھر زيادہ کاٹے وہ زيادہ مستقل مزاج اوہ نہيں ليچڑ ہو جاتا ہو۔ آخر مچھر سے بھی جرثومے انسان ميں منتقل ہوتے ہوں گے نا؟

11:11 PM  
Blogger جہانزیب

اور ايک تصيح اور مزاق نہيں مذاق :P

11:14 PM  
Anonymous Web Designer Group

What a question and amazing answers. By the way, why Mosquito does so, with the peoples of Karachi?

12:34 AM  

تبصرہ کیجیے

کیفے حقیقت